Category: organic kitchen
Healthy and Unhealthy Eating Habits

How you eat is as important as what you eat. Here are some jariboti.pk ‘s suggestions for healthy eating, followed by a list of habits to avoid.

EATING HABITS TO CULTIVATE

  • Choose foods according to your constitution. They will nourish you and not aggravate your doshas.
  • Choose foods according to the season.
  • Eat fresh, sattvic food of the best quality you can afford.
  • Do not eat unless you feel hungry.
  • Do not drink unless you feel thirsty. If you are hungry and you drink instead of eating, the liquid will dissolve the digestive enzymes and reduce your gastric fire.
  • Sit, don’t stand, to eat.
  • When eating, eat. That is, don’t read, watch TV, or be distracted by too much conversation. Focus on the food.
    Chew well, at least 32 times per mouthful. This enables the digestive enzymes in the mouth to do their work properly.
  • Eat at a moderate speed. Don’t gobble your food.
  • Fill one-third of your stomach with food, one-third with water, and leave one-third empty.
  • Don’t eat more at a meal than the amount of food you can hold in two cupped hands. Overeating expands the stomach so that you will feel the need for additional food.
  • Overeating also creates toxins in the digestive tract.
  • During meals, don’t drink iced drinks or fruit juice, sip a little warm water between mouthfuls of food.
  • Honey should never be cooked. If it is cooked, the molecules become like a glue that adheres to mucous membranes and clogs the subtle channels, producing toxins.

UNHEALTHY EATING HABITS:

  • Overeating
  • Eating too soon after a full meal
  • Drinking too much water, or no water, during a meal
  • Drinking very chilled water during a meal, or indeed at any time Eating when constipated
  • Eating at the wrong time of day, either too early or too late.
  • Eating too much heavy food or too little light food
  • Eating fruit or drinking fruit juice with a meal
  • Eating without real hunger
  • Emotional eating
  • Eating incompatible food combinations
  • Munching between meals
  • Incompatible Food Combinations
kalonji moot k siwa her marz ka ilaj

مختلف نام:
 
شونیز، جستہ السودا، اور بلک کروے، نایجیلا ستویا، کرشن جیرک، بلک کیومن۔ سنگریلا۔
 
تاریخ:
 
کلونجی کے پودے کی اصل جاے پیداش روم ہے۔ اور اس کے آثار مصر کے مختلف علاقوں سے آثارے قدیمہ اور احرام مصر سے بھی دریافت ہوا ہے جس میں توتخ آمن کا مقبرہ بھی شامل ہے۔ سونیز اور جستہ السوداء کے نام سے پرانی عربی کتابوں میں کلونجی کا زکر ملتا ہے۔ اور چونکہ اس کی اصل جاے پیداش روم ہے تو اس سے اندازہ ہوتا ہے کے قدیم یونانی اطباء اس سے بخوبی واقف تھے اور انہی سے اس کا علم عرب اظباء نے سیکھا۔ ہندوستان میں یہ ایک خدرو پودا ہے یا پھر اس کی کاشت کی جاتی ہے جناچہ ہماچل پردیش اور آسام میں اس کی کاشت ہوتی ہے۔ مشرقی اترپردیش میں کلونجی کو سنگریلا کہا جاتا ہے اور اسے گیڑوں سے گنے کے کھیتوں کو محفوظ رکھنے کے لیے کھیت کے اطراف ایک قطار کی صورت ڈالا جاتا ہے۔ اس عمل سے گیڈر کھیت میں داخل نہیں ہوتے۔ 
آیورویدک کتابوں میں اس کا نام “کرشن جیرک” لکھا ہے۔ جس کے معنی ذیرہ سیاہ ہوتے ہیں لیکن اس سے کلونجی کا کوءی تعلق نہیں۔ 
بخاری اور مسلم میں ہدیس ہے کلونجی میں سواے موت کے ہر بیماری کا علاج ہے۔
 
 
ماہیت: 
 
کلونجی کا پودا ۴۵ سینٹی میٹر اونچا ہوتا ہے۔ پتے ۲ سے ۴ سینٹی میٹر لمبے اور دو یا تین حصوں میں منقسم ہوتے ہیں۔ پھال اس کے ہلکے نیلگوں اور چھوٹے ہوتے ہیں جن میں آٹھ پنکھڑیاں ہوتی ہیں۔ اکثر شہد کی مکھی ان سے رس حاصل کرتی ہے۔ تخم [بیج] تکونے سیاہ رنگ کے، تیز بواور تلخ مزہ کے ہوتے ہیں۔ 
 
مزاج:
 
کلونجی کا مزاج گرم و خشک ہوتا ہے۔ اگر گرم اور خشک مزاج والے استعمال کریں تو اس کے ساتھ سرد و تر چیز لیں۔
 
افعال:
 
محلّل و کاسر ریاح، مدر حیض ا مقوی اعصاب ہونے کی وجہ سے کلونجی کو نفخ شکم، درد شکم، قولنج، استسقاء، احتباس حیض، ضعف اعصاب، ضعف دماغ، نسیان، فالج، رعشہ جیسے امراض میں استعممال کیا جاتا ہے۔ 
 
استعمال:
 
نفخ شکم کے لیے ۱گرام سفوف کلونجی پانی کے ساتھ استعال کریں-
احتباس حیض کےلیے کلنجی کو کوٹ کے پانی میں یبال لیں اور وہ پانی یستعمال کریں۔
اعصابی طاقت کے لیے ۲ گرام کلونجی کا سفوف بنا کر شہد میں ملا کر روزانہ صبح نہار منہ استعمال کریں۔
کلونجی کا تیل اگزیما اور سوراسس ک لیے استعمال ہوتا ہے۔
دانتوں اور مسوڑوں کے لیے کلونجی کو سرکہ میں ملا کر استعمال کاریں۔
دمہ، کھانسی یا الرجی میں ایک پیالی گرم پانی میں ۱ چمچہ شہد اور آدھا چمچہ کلونجی کا تیل ملا کر صبح نہار منہ اور رات کو کھانے کے بعد استعمال کریں۔
زیابیطس میں ۱ پیالی کہوہ میں آدھا چمچہ کلونجی کا تیل ملا کر استعمال کریں
دل کے تمام امراض میں ایک پیالی بکری کے دودھ میں آدھا چمچہ کلونجی کا تیل ملا کر استعمال کریں
جوڑوں کے درد میں ۱ چمچمہ سرکہ ، ۲ چمچ شہد اور آدھا چمچ کلونجی کا تیل ملا کر مالش کریں
یاداشت بڑھانے کے لیے ۱۰ گرام تازہ پودینا ایک پیالی پانی میں ابال کر آدھا چمچ کلونجی کا تیل ملا کر کے استعمال کریں
Unique Tips for Small House Gardens

Whether the house is small or large, there is a place for gardening on terraces or not, even though a small garden will be available in the houses of horticultural people. However, in modern times, a beautiful garden estate has become the state-owned Sambal. Increases the beauty of it also increases the responsibility of its houses. It is a hobby that reduces depression and gives eyes to it, as well as through pure food supply.

The number of people who like horticulture is increasing in the day. Due to the rising prices of people, people prefer to live in small houses. Due to which they are very low to meet the hobby. It saves space. But how can the garden made in a small place can be seen as big as possible, this question is discussed today. Yes! Today, we will talk about the ways you act on your small garden. Can show more fun and upward.

Better start in less space

If you do not have any plot for gardening, do not take tension, tray permeable trolley is also available to meet the hub of small places in the market. These tricks are made from two to three stapes. At the top and second gardening equipment can be maintained. On the other hand, through these trolley you can fulfill the hobby of horticultural, on the other hand you will get your garden unique style.

If you are not convinced to keep the trolley, then the other way is of the gardening trace that can be used for peaches or plants.

Place planning

A small crocodile is a better place than a large grass-filled garden. Therefore, do not worry about the size of your garden. Often gardener wants to pile the nets so that they can assess the expected production by measuring the vacuum between the plants. Whatever method you choose, you should plan a garden about your garden. It is beneficial to do so. Then point to the places where water access and sunlight are available.

Garbage pile

If you have less space and there is no clear arrangement for raising grass, then stir up garlic to cultivate vegetable vegetable in your garden, which can also be used for planting plastic planters. On the other side, if your garden is full and large, then on the other side, your garden will be full of interest. On the other hand, the greenhouse decorative wall can also play a crucial role in this place.

Vertical plantor construction

Vertical plantor construction at low places is an excellent idea .Yes! In horizontal ways, complementary gardening hinges can be used in a vertical plantor. This plant can be made more attractive by beautiful paintings. Flowers can be extended to the top with the help of long green pomegranates and polishes, and the increase can be increased to several times. A vertical garden will be a source of work for you. You will be able to look at your level and stay uncomfortable.

Outdoor spaces and wraps

If you have a limited space on the ground, outdoor area roofing can be enjoyed by hobbying. This style is especially popular in big houses these days.

Herbal Welk

“Herbal Herbal” is a unique Idea for your guest or family to celebrate. Plants such as Podina, Rummer and Niaziebo are best used for garden interior and rituals. These plants are planted in these places The Garden will be the best in the rare and big show.

Produce at least two vegetables together

Vegetable gardens are small and pleasant, which keeps eyeing. But it is hard to do so, go to local nursery and find out which rugs can be grown in a carriage. Seeds like similar vegetables are fine, but this decision depends on the depths of vegetable and their roots.

گھر چھوٹا ہو یا بڑا ،ٹیرس پر باغبانی کے لیے جگہ موجود ہو یا نہیںاس کے باوجود باغبانی کے شوقین افرادکے گھر وں میں چھوٹا سا باغ تو ضرور ملے گا ۔ویسے بھی جدید دور میںگھروں میں ایک خوبصورت باغ اسٹیٹس سمبل بن چکاہے ۔باغ جہاں گھر کی خوبصورتی بڑھاتا ہے وہاں اس کے مکینوں کی ذمہ داری میں بھی اضافہ کرتا ہے۔یہ ایک ایسا شوق ہے جوڈیپریشن کم کرتا اور آنکھوں کو فرحت پہنچاتا ہے،اس کے ساتھ ہی خالص غذا کی فراہمی کاذریعہ بھی بنتا ہے۔

باغبانی کا شوق رکھنے والے افراد کی تعداد میں دن بدن اضافہ ہوتا جارہا ہے۔مکانات کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے باعث لوگ چھوٹے مکانات میں رہنے کو ترجیح دینے لگے ہیں۔جس کے باعث باغبانی کا شوق پورا کرنے کے لیے ا ٓپ کے پاس نہایت کم جگہ بچتی ہے۔لیکن ایک چھوٹی سی جگہ میں بنائے گئے باغ کو زیادہ سے زیادہ بڑا کیسے دکھایا جاسکتا ہے ،یہ سوال آج موضوع گفتگو ہے ۔جی ہاں !آج ہم بات کریں گے ان طریقوں پر جن پر عمل کرکے آپ اپنے چھوٹے سے باغ کو مزید پرلطف اور بڑ ا دکھا سکتے ہیں۔

کم جگہ میں بھی بہتر آغاز

اگر آپ کے پاس گارڈننگ کے لیے کوئی پلاٹ موجود نہیںتو ٹینشن نہ لیں، مارکیٹ میں چھوٹی جگہوں پرباغبانی کا شوق پورا کرنے کے لیے بھی ٹرے پرمبنی ٹرالی دستیاب ہیں۔یہ ٹرالیاں دو سے تین اسٹیپ پر بنی ہوتی ہے۔ سب سے اوپرپودےاور دوسرے پر باغبانی کا سامان بآسانی رکھا جاسکتا ہے۔ ان ٹرالیوں کے ذریعے ایک طرف آپ باغبانی کا شوق پورا کرسکیں گے تو دوسری طرف آپ اپنے باغ کو منفرد انداز دے پائیں گے۔

اگر آپ ٹرالی رکھنے کے قائل نہیں تو دوسرا طریقہ گارڈننگ ٹریز کا ہے ان ٹریز کوپھولوں یا پودوں کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔

جگہ کی منصوبہ بندی

ایک چھوٹی مگراچھی طرح دیکھ بھال کی گئی جگہ ایک بڑے گھاس پھوس سے بھرے باغ سے بہتر ہے۔ اسلئے اپنے باغیچے کے ناپ کے بارے میں فکرمند نہ ہوں۔ اکثر باغبان جالیوں کا جال لگانا چاہتے ہیں تاکہ پودوں کے مابین خالی جگہ کی پیمائش کرکے متوقع پیداوار کا جائزہ لے سکیں۔ آپ جو بھی طریقہِ کار اختیار کریں اپنے باغیچے کے بارے میں ایک سرسری سا منصوبہ ضرورتیارکیجیے۔ ایسا کرنا فائدہ مند رہتا ہے۔ اسکے بعد ان جگہوں کی نشاندہی کریں جہاں پانی کی رسائی اور سورج کی روشنی دستیاب ہے۔

گملوں کا ڈھیر

اگر آپ کے پاس جگہ کم ہے اور گھاس اگانے کا کوئی واضح انتظام موجود نہیں تو اپنے باغ میںپودوںیا سبزیوں کی کاشت کے لیے گملوں کا ڈھیر لگادیں ان کی کاشت کے لیے پلاسٹک پلانٹر کو بھی استعمال میں لایاجا سکتا ہے ۔ ان گملوں کے ڈھیر سے ایک طرف آپ کا باغ ہرا بھرا اور بڑا لگے گا تو دوسری طرف آپ کا باغبانی کا شوق بھی پورا ہوگا۔یہی نہیں اس مختصر جگہ ہری بھری ڈیکوریٹڈ وال بھی اس جگہ کو منفرد دکھانے میں اہم کردار ادا کرسکتی ہے۔

عمودی پلانٹر کی تعمیر

کم جگہوں پر ورٹیکل پلانٹر کی تعمیر ایک بہترین آئیڈیا ہے ۔جی ہاں! افقی طرز اندازمیں گملوں کے ذریعے باغبانی کے شوق کی تکمیل کے علاوہ ایک عمودی پلانٹر میں بھی گملے لگائے جاسکتے ہیں۔اس پلانٹر کو خوبصورت پینٹ کے ذریعے مزید دلکش بنایا جاسکتا ہے ۔ لمبی سبزخوردنی پھلیوں اورلمبے ڈنڈوں کی مدد سے پھولوں کی بیلوں کو اوپر تک چڑھایا جا سکتا ہےاورپیداوار کوکئی گُنا بڑھایاجاسکتا ہے۔ ایک عمودی باغ آپ کیلئے اوپرچڑھ کر کام کرنے کا ذریعہ بنے گا۔ آپ اپنی سطح ِ نظرپرکام کریں گےاور کمردرد سے بچے رہیں گے۔

آؤٹ ڈور اسپیس اورچھتوں میں لٹکے گملے

زمین پر اگر آپ کے پاس جگہ محدود ہے تو آؤٹ ڈور ایریا کی چھتوں کو کام میں لاتے ہوئے باغبانی کا شوق پورا کیا جاسکتا ہے ۔یہ اسٹائل ان دنوں بڑے گھروں میں بھی خاصا مقبول ہے۔

ہربل ویلکم

گارڈن میں آپ کا یا مہمانوں کا ویلکم کرنے کے لیے ’’ہربل ویلکم‘‘ ایک منفرد آئیڈیا ہے ۔پودینہ،روزمیری اورنیازبو جیسے پودوں کا استعمال گارڈن کے داخلی حصے اور راہداری کے لیے بہترین ہے۔ان جگہوں پر ان پودوں کی کاشت آپ کے گارڈن کو ہرا بھرااور بڑا دکھانے میں بہترین ثابت ہوگی۔

کم ازکم دو سبزیاں ایک ساتھ اگائیں

سبزیوں کا باغیچہ چھوٹا سااورخوشنما ہوتا ہے جو آنکھوں کو جچتا ہے۔ لیکن اس کے لیے محنت بھی اتنی ہی کرنی پڑتی ہے،مقامی نرسری جاکر معلوم کریں کہ کونسی دوسبزیاں ایک کیاری میں اُگائی جا سکتی ہیں۔ ایک جیسی ضرورت والی سبزیوں کو اکٹھے بیجنا ٹھیک رہتا ہے مگر اس فیصلے کا انحصار سبزیوں کے ناپ اور انکی جڑوں کی گہرائی پر منحصر ہونا چاہیے۔

Source. jang news paper
Make a Garden in a Small Place

Let’s talk about some small gardens that can be planted in any corner, that’s a small place for them. It is very important that do not mix many types of flowers and plants during the process of choosing plants. Balance and harmony remain in harmony and the main point is to distribute the size of the plants according to the size of the spaces.

If not place, today the vintage garden or vertical gardens are excellent. You do not need a huge garden, but only one type of vegetation will work, and you will not have to worry too much about their care. Just like small rods can be made in small balls with a wooden bench in any corner.

It is also necessary to understand the size of any plant before selecting it. If you use different plants for the walls, you will leave the living room. The wooden bench and some decorative items can be used with it.

Do not think anything to build a small garden. The only thing to do is make things simple and beautiful. A vertical garden can be landscaping with the plants in different sizes and stones on the floor as well as hanging plants on the wall.

Corner Gardens … Garden in a small place
A small tree for a small garden can be decorated with a stone floor and wood deck. And a white wooden bench or a cushion can be kept with.

The stone is the right choice for those who like the garden in a more natural way and if they need wooden decks and benches in decoration, make sure that it is applied and the same color is too high.

The apartment does not have enough space for a garden, but we can offer a part of the apartment balcony to the herbs and plants.

If there is a small amount of space, the wooden deck can be used in the garden between the rocks. In addition, vertical wall and ground corrosion and plants can be planted.

Similarly, an Idea may be some stones and small coconut trees can be planted with them in vessels.

If you have a vacant hall, for example, a small garden may have a great opportunity to spend time with plants and flowers.

It is important to take care that the plants or cats made for the plants on the roof should have a system of water drainage that neither they nor can they be kept in carpets or can damage the roof. Garbage and carriers should be kept on the ceiling in a manner that the height of their feet is at least three inches above the ceiling so that more water can be easily removed from dams and does not stay on the roof. In this way the ceiling level will also be dry and there will be no danger of tilting the roof or damaging the building. Similarly, it is also important that the dense weight of the dams increases even more, as well as the roof of the roof should be kept in mind. Plants should keep proper distance so that their growth does not affect. Light, water and fertilizer should be arranged. Properties should be done properly and shoulders. If on the roof, the place for vegetation is made and if the seating space is made from the center of the seating center, then a good place to make a seating can be made.

Raising plants, bulls, vegetables and other herbs on roofs can not only be needed only for the needs of your home but also the intensity of the weather can be controlled very well.

The place is small or large plants should be given adequate amount of sunlight as well as water and fertilizer. By decorating decorative plants, we can make our home environment beautiful, and even in the city’s densely populated areas, the atmosphere can accommodate any corner or terrace.

آئیں کچھ چھوٹے باغوں کی بات کرتے ہیں جو کسی بھی کونے میں لگائے جاسکتے ہیں یعنی ان کیلئے چھوٹی سی جگہ بھی کافی ہوگی۔ یہ بہت ضروری ہے کہ پودوں کو منتخب کرنے کے عمل کے دوران کئی اقسام کے پھولوں اور پودوں کو نہ ملائیں۔ لہٰذاماحول میں توازن اور ہم آہنگی رہے اور اہم نقطہ یہ ہے کہ پودوں کے سائز کو خالی جگہوں کے سائز کے حساب سے تقسیم کریں۔

جگہ نہ ہو تو آج کل ورٹیکل گارڈن یعنی عمودی باغ بہترین ہوتے ہیں۔ آپ کو ایک بہت بڑے باغ کی ضرورت نہیں ہےلیکن صرف ایک قسم کے پودوں سے بھی کام چل جائے گا اور ان کی دیکھ بھال کے حوالے سے بھی آپ کو مختلف کاوشیں نہیں کرنی پڑیں گی۔ جیسے کسی بھی کونے میں لکڑی کی بینچ کے ساتھ چھوٹے گلدانو ں میں چھوٹے گلاب لگائے جاسکتےہیں۔

کسی بھی پلانٹ کو منتخب کرنے سے پہلے اس کا سائز بھی سمجھنا ضروری ہے۔ دیواروں کے لیے مختلف پودوں کا استعمال کریں تو رہائش گاہ کی دیوار کو چھوڑ دیں گے۔اس کے ساتھ لکڑی کے بینچ اور چند آرائشی اشیا ء استعمال کی جاسکتی ہیں۔

ایک چھوٹے سے باغ کی تعمیر کے لئے زیادہ کچھ نہیں لگتا ۔ صرف چیزوں کو سادہ اور خوبصورت بنانے کی ضروت ہوتی ہے ۔ ایک عمودی باغ دیوار پر ہینگنگ پلانٹس لگانے کے ساتھ ساتھ فرش پر مختلف سائز اور پتھروں میں پودوں کے ساتھ زمین کی تزئین کی جاسکتی ہے۔

کارنر گارڈنز… چھوٹی جگہ میں باغ لگائیں
چھوٹے باغ کیلئے ایک چھوٹا سا درخت پتھر کے فرش اور لکڑی ڈیک کے ساتھ سجایا جاسکتاہے۔ اورایک سفید لکڑی والا بنچ یا کوئی کشن بھی ساتھ رکھا جاسکتاہے۔

پتھر ان لوگوں کے لئے صحیح انتخاب ہے جوزیادہ قدرتی انداز میں باغ کو پسند کرتے ہیں اور سجاوٹ میں اگر لکڑی کے ڈیک اور بینچ کی ضرورت ہوتو اسے ضرور لگائیں اورعمدہ سا رنگ بھی کرلیںتو دیدہ زیب معلوم ہوگا۔

چلیں اپارٹمنٹ میں ایک باغ کے لئے کافی جگہ نہیں ہےلیکن ہمارے پاس اپارٹمنٹ کی بالکنی کے ایک حصے کوجڑی بوٹیوں اور پودوں کے لئے وقف کیا جاسکتاہے ۔

تھوڑی زیاد ہ جگہ ہو تو اس باغ میں لکڑی کے ڈیک کا استعمال پتھروں کے درمیان کیا جاسکتاہے۔ اس کے علاوہ عمودی دیوار اور زمین پرپھول اور پودے لگائے جا سکتے ہیں۔

اسی طرح ایک آئیڈیا یہ ہو سکتاہے کہ کچھ پتھرلگا کر ان کے ساتھ چھوٹے ناریل کے درخت برتنوں میں لگائے جاسکتے ہیں۔

اگر آپ کے پاس ایک خالی ہال ہے تو مثال کے طور پر ایک چھوٹے سے باغ میں پودے اور پھولوں کے ساتھ وقت گزارنے کا اچھا موقع ہاتھ آسکتاہے۔

یہ خیال رکھنا ضروری ہوتا ہے کہ چھت پر پودوں کے لئے جو گملے یا کیاریاں بنائی جائیں اُن میں فالتو پانی کے نکاس کا ایسا نظام ہو کہ نہ توہ وہ کیاری یا گملے میں رکے نہ ہی وہ چھت کو نقصان پہنچا سکے۔ گملوں اور کیاریوں کو چھت پر اس انداز سے رکھا جائے کہ چھت سے ان کے پیندے کی اُونچائی کم از کم تین انچ ہو تاکہ زیادہ پانی آسانی سے گملوں سے خارج ہو سکے اور چھت پر ٹھہرے بھی نہ۔ اس طرح سے چھت کی سطح بھی خشک رہے گی اور چھت ٹپکنے یا عمارت کو پانی سے نقصان پہنچنے کا خطرہ بھی نہ ہوگا۔ اسی طرح یہ بات بھی اہم ہے کہ مٹی کے ساتھ گملوں کا وزن اور بھی بڑھ جاتا ہے ، اس بات کے پیش نظر چھت کی مضبوطی کو بھی دھیان میں رکھنا چاہئے۔ پودوں کے درمیاں مناسب فاصلہ رکھیں تاکہ اُن کی بڑھوتری کا عمل متاثر نہ ہو۔ روشنی، پانی اور کھاد کا مناسب بندوبست ہونا چاہئے۔ مناسب وقفے سے گملوں اور کیاریوںکی گوڈی کرنی چاہئے۔ چھت پر دیواروں کے ساتھ ساتھ اگر پودوں کے لئے جگہ بنا لی جائے اور درمیان میں اُٹھنے بیٹھنے کی جگہ سلیقے سے بنا لی جائے تو اُٹھنے بیٹھنے کے لئے ایک اچھی جگہ بنائی جاسکتی ہے۔

چھتوں پر پودے، بیلیں، سبزیاں اور دوسری جڑی بوٹیاں اُگانے سے نہ صرف اپنے گھر کے کچن کی ضرورت پوری کی جاسکتی ہے بلکہ موسم کی شدت کو بھی کافی حد تک کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔

جگہ چھوٹی ہو یا بڑی پودوں کو مناسب مقدار میں سورج کی روشنی کے ساتھ ساتھ پانی اور کھاد وغیرہ دی جانی چاہئے۔ آرائیشی پودے لگا کر ہم اپنے گھر کے ماحول کو خوبصورت بنا سکتےہیں اور شہر کے گنجان آباد علاقوں میں بھی اپنے گھر کے کسی کونے یا چھت کو پر فضا بنا سکتے ہیں۔

 

Source: jang news paper
Show More Posts